مائیکرو فنانس

مائکروفائنانس یا نچلے درجے پر مالی معاونت ایک ایسےمؤثر نظام کے طور پر اپنا مقام بنا چکا ہے جو سماجی و معاشی ترقی میں اہم کردار ادا کرتا ہے۔ صوبہ خیبر پختونخواہ کے معاشی خدوخال بے شمار چھوٹے اور درمیانے درجے کے کاروباروں سے مزئین ہیں جو صوبہ بھر میں پھیلے ہوئے ہیں ۔ تا ہم اس سے پہلے کبھی ان کاروباروں کی مالی معاونت کے بارے میں اقدامات نہیں کئےگئے۔ اس کی ایک بڑی وجہ یہ ہے کہ ان کاروباروں کو سرمایہ کاری کیلئے زیادہ موزوں نہ سمجھتے ہوئے مالی اداروں نے ان پر زیادہ توجہ نہیں دی۔ بینک آف خیبراس بات پر یقین رکھتا ہے کہ چونکہ چھوٹے کاروبار نہ صرف آمدن پیدا کرتے ہیں بلکہ روزگار کے مواقع بھی مہیا کرتے ہیں، لہذا بطور متبادل زریعہ برائے معاشی ترقی، ان کاروباروں کی سرپرستی کی جانی چاہئیے ۔ اسی مقصد کے تحت بینک آف خیبر نے 1995 میں مائکرو بزنس ڈویلپمنٹ اور 1997 میں رورل فائنانشل سروسز یا دیہی علاقوں کی مالی معاونت کے سلسلے کو شروع کیا۔ یہ پہلا موقع تھا کہ جب کسی کمرشل بینک نے باقاعدہ منصوبہ کے تحت چھوٹے درجے کے کاروبار کی صلاحیت بڑھانے کا آغاز کیا۔ اس منصوبے کو مزید تقویت ملی جب نامور بین الاقوامی مالیاتی اداروں نے نہ صرف اس منصوبے کی حوصلہ افزائ کی، بلکہ اپنی بھرپور مالی وتکنیکی معاونت مہیاء کی۔ ان اداروں میں ایشائی ترقیاتی بینک (ADB)، بین الاقوامی فنڈ برائے زرعی ترقی (IFAD)، جرمن ڈویلپمنٹ بینک (KFW)، سوئس ایجنسی برائے مشترکہ ترقی(SDC)، پاک سوئس (SSEP) اور ورلڈ بینک شامل ہیں۔ بینک آف خیبر اپنے آپ کو قابلِ برداشت بنیادوں پر خیبر پختونخواہ کے سب سے بڑے مائکرو فائنانس سہولیات بہم پہنچانے والے بینک کے طور پر مستحکم کرنے کا عزم رکھتا ہے۔ ہمارا مقصد معاشرے کے کم آمدنی والے اور غیر مراعات یافتہ طبقہ بالخصوص خواتین کی مالی اعانت کرنا ہے، تاکہ وہ اپنے رہن سہن اور حالاتِ زندگی میں مثبت تبدیلیاں لاسکیں۔ہمارے اس عزم کی تکمیل روز گار کے بہتر مواقع بھی پیدا کرے گی جس کے باعث آمدن میں اضافہ اور غربت کا خاتمہ ممکن ہو سکے گا۔ چنانچہ، اس مقصد کو پورا کرنے کی غرض سے بینک آف خیبر چھوٹے انفرادی اور گروپ قرضہ جات نئے یا پہلے سے چلتے ہوں کاروباروں کو فراہم کرتا ہے ، تاکہ وہ اس رقم سے اپنے کاروبار میں جدت لاسکیں یا پھر کاروباری سرمایہ کا حجم بڑھانے کیلئے استعمال کر سکیں ۔ بینک آف خیبر نے ایک اچھا آغاز کیا ہے مگر اس شعبے میں ابھی ترقی کی بہت گنجائش موجود ہے۔ بینک اب تک، 27000 سے زائد صارفین کو کُل 1.3 بلین روپئے کے قرضہ جات فراہم کر چکا ہے جن میں زیادہ تر قرضہ جات کی مالیت 50،000 روپئے فی صارف سے کم ہے۔

خبریں

شیئر ہولڈرز کی معلومات، بی او کے کارپوریٹ بریفنگ سیشن

شیئر ہولڈرز کی معلومات، بی او کے کارپوریٹ بریفنگ سیشن

موجودہ کسٹمرز کی مختلف قسم کے اکاؤنٹس کی بائیو میٹرک تصدیق کے بارے میں عوامی بیداری

اسٹیٹ بینک آف پاکستان نے بیرون ملک مقیم صارفین کیلئے بی پی آر ڈی سرکولر لیٹر نمبر 16 آف 2019 کے  تحت درجِ ذیل ہدایات جاری کی ہیں۔ (الف) عدم رہائشی پاکستانی (این آر پی): صارف  کی...

مقام